Recently Finished
Live Cricket
Upcoming Matches
No live scores available
View All Matches

سال 2017 میں پاکستان کرکٹ ٹیم کو چیمپئنز ٹرافی میں کامیابی ملی جس کے بعد یہ تصور کیا جا رہا تھا کہ اب پاکستان کی ٹیم کسی بھی بڑی ٹیم کو شکست دینے کیلئے تیار ہو چکی ہے۔ چیمپئنز ٹرافی کے بعد ہونے والی ہر سیریز اور ٹورنامنٹ میں پاکستان ٹیم مینجمنٹ نے دعویٰ کیا کہ وہ ورلڈکپ کی تیاری کر رہے ہیں مگر اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ ٹیم کو ان دو برسوں ورلڈکپ تیاریوں کے نام پر صرف ناکامیاں ہی ملی ہیں۔
چیمپئنز ٹرافی فائنل میں بھارت کو شکست دینے کے بعد اب تک قومی ٹیم نے 41 ایک روزہ میچز کھیلے جس میں صرف 16 میچوں میں ٹیم فاتح رہی، 23 میں شکست ہوئی اور دو میچ بغیر کسی نتیجے کے ختم ہوئے۔ ان 16 فتوحات میں بھی پاکستان نے 12 میچ زمبابوے، سری لنکا، افغانستان اور ہانگ کانگ جیسی کمزور ٹیموں کیخلاف جیتے جبکہ بڑی ٹیموں کے خلاف دو سال میں صرف چار کامیابیاں قومی ٹیم کے حصے میں آئیں۔
ان دو سال میں بڑی ٹیموں کے خلاف پاکستان ٹیم کا ریکارڈ دیکھا جائے تو پاکستان اور آسٹریلیا کے درمیان 6 میچز ہوئے، پاکستان ایک میچ بھی نہیں جیت سکا، نیوزی لینڈ سے 8 مقابلے ہوئے جس میں سے 6 میں شکست ہوئی اور ایک میچ میں کامیابی ملی جبکہ ایک میچ غیرنتیجہ رہا۔ پاکستان کو بھارت کے خلاف کھیلے گئے دونوں میچوں میں شکست ہوئی۔
ساؤتھ افریقہ کیخلاف 5 میچوں میں قومی ٹیم تین میں ناکام ہوئی اور دو میں فتح حاصل کی جبکہ انگلینڈ کے خلاف 6 میچوں میں سے صرف ایک مرتبہ فتح قومی ٹیم کے نام رہی، ایک میچ بارش کی نذر ہوا اور 4 مقابلوں میں انگلینڈ نے گرین شرٹس کو مات دی۔ اس کے علاوہ بنگلہ دیش اور ویسٹ انڈیز سے بھی گرین شرٹس کو ایک، ایک میچ میں شکست ہوئی ہے۔